Skip to main content

گلگت بلتستان اور پاک چین اقتصادی راہداری

By Noor Pamiri  

گزشتہ دنوں اسلام آباد میں ہفتہ وار بریفنگ کے دوران دفترخارجہ کے ترجمان نے کہا کہ گلگت بلتستان پاکستان کا حصہ نہیں ہے، اور اسے ملک کا آئینی حصہ بنانے کی کوئی کوشش نہیں کی جارہی ۔ انہوں نے یہ ھی کہا کہ گلگت بلتستان کشمیر کا حصہ ہے اور مسئلہ کشمیر کے حل ہونے تک علاقے کو آئینی صوبہ بنانایاپھر آئینی حقوق دینا ممکن نہیں ہے۔

گلگت بلتستان قانون ساز اسمبلی کے انتخابات سے چند روز قبل وزیر اعظم میاں نواز شریف نے گلگت میں اعلان کیا تھا کہ علاقے کو آئینی حقوق دینے کے لیے ایک کمیٹی بنائی جائےگی۔ اس سلسلے میں امور خارجہ کے مشیر جناب سرتاج عزیز صاحب کو ذمہ داری دی گئی تھی۔ وزیر اعظم کے اس اعلان نے علاقے کے لوگوں کی ایک کثیر تعداد کو یہ ڈھارس بندھائی تھی کہ شائد اب جبر کے دن تھو ڑے ہیں۔ لیکن دفتر خارجہ کے ترجمان نے لگی لپٹی رکھے بغیر اس کمیٹی کے قائم ہونے سے پہلے ہی اس کے غبارے سے ہوا نکال دی۔ یعنی، اب کمیٹی بنانے کی ضرورت ہی باقی نہیں رہی کیونکہ بوجوہ، ایسا گمان ہوتا ہے کہ اگر کمیٹی وجود میں آبھی جاتی تو اس سے گلگت بلتستان کے مسائل حل نہیں ہو سکتے تھے۔
گلگت بلتستان ایک عجیب وغریب خطہ ہے۔ یہ پاکستان کا واحد علاقہ ہے جس کے باشندے ملک میں شمولیت کے لیے گزشتہ دنوں اسلام آباد میں ہفتہ وار بریفنگ کے دوران دفترخارجہ کے ترجمان نے کہا کہ گلگت بلتستان پاکستان کا حصہ نہیں ہے، اور اسے ملک کا آئینی حصہ بنانے کی کوئی کوشش نہیں کی جارہی ۔
دہائیوں سے کوششوں میں مصروف ہیں۔ ایسا بہت کم ملکوں میں ہوتا ہے۔ پاکستان میں مرکز سے الگ ہونے کی تحریکیں تو بہت ہیں، لیکن مرکز میں شامل ہونے کی تڑپ رکھنے والے اس علاقے کے باشندے اپنی جگہ منفرد ہیں۔ آج بھی تمام تر محرومیوں کے باوجود یہاں کے زیادہ تر باسی پاکستان زندہ باد کے نعرے لگاتے ہیں اور صرف نعروں پر ہی اکتفا نہیں کرتے۔ اس علاقے کے جوان سرحدوں، شہروں، قصبوں اور دیہات میں افواج پاکستان اور دیگر مسلح اداروں میں شامل ہو کر قربانیاں پیش کر رہے ہیں۔ اس علاقے کے بیٹے اور بیٹیاں ریاستی سرپرستی نہ ہونے کے باوجود دنیا کی بلند و بالا چوٹیوں پر ہلالی پرچم لہرا چکے ہیں اور فخر سے سینہ تان کر کہتے ہیں کہ ہم پاکستانی ہیں۔ لیکن پاکستان انہیں اپنا شہری تسلیم کرنے، حقوق دینے اور منتخب و غیر منتخب ریاستی اداروں میں نمائندگی دینے سے مسلسل گریزاں ہے۔
حال ہی میں بنائی گئی بائیس رکنی کمیٹی کی مثال لیجئے جس کے ذمے پاک چین اقتصادی راہداری کی نگرانی کا اہم اور انتہائی نازک کام ہے۔ مذکورہ کمیٹی میں سندھ، بلوچستان، پنجاب اور خیبر پختونخوا کے نمائندے شامل ہیں، لیکن ڈھونڈے سے بھی کوئی نام گلگت بلتستان سے نہیں ملے گا۔ ایسا لگتا ہے کہ گلگت بلتستان کو اس منصوبے میں کوئی حصہ نہیں دیا جائےگا، باوجود اس حقیقت کے کہ شاہراہ قراقرم، جسے توسیع دے کر پاک چین اقتصادی راہداری بنایا جارہا ہے، گلگت بلتستان کے ایک کونے سے دوسرے کونے ، یعنی بھاشا سے خنجراب تک پھیلی ہوئی ہے۔
پاک چین اقتصادی راہداری نگران کمیٹی میں نمائندگی سے محروم گلگت بلتستان کے عوام اس منصوبے کے اہم حصے دار ہیں، کیونکہ اس کی تعمیر میں علاقے کے وسائل استعمال ہو رہے ہیں، اور جن علاقوں سے یہ راہداری گزرتے ہوے چین میں داخل ہوتی ہے، وہ اس “متنازعہ” خطے کے “متنازعہ” باسیوں کی قانونی ملکیت ہے ۔
میرے خیال میں وہ وقت آن پہنچا ہے کہ پاکستان کی ریاست گلگت بلتستان کے لوگوں کے ساتھ ایک نیا اور مضبوط عمرانی معائدہ کرے تاکہ آئینی مسائل حل کرنے کے ساتھ ساتھ، قدرتی وسائل پر مقامی لوگوں کی حقِ ملکیت تسلیم کرنے اور صاف اور شفاف طریقے سے وسائل اور آمدنی کے منصفانہ استعمال کی سبیل ہو سکے۔
گلگت بلتستان کے باشندے اقتصادی راہداری کی نگرانی کے لیے بنی اس بائیس رکنی کمیٹی کو گلگت بلتستان کے حقوق کا محافظ تسلیم نہیں کر سکتے۔ یہ ایک غیر نمائندہ کمیٹی ہے جس سے گلگت بلتستان کے لوگوں کے قانونی، معاشی اور اقتصادی حقوق کی پاسداری کی توقع رکھنا خودفریبی کے مترادف ہے۔ گلگت بلتستان کے لوگ مجوزہ راہداری کے خلاف نہیں لیکن موجودہ سیاسی و غیر آئینی نظام میں اس راہداری سے ہم خاطر خواہ فائدہ نہیں اُٹھا سکتے ہیں۔
پاکستان کی بقا اور ترقی کے لیے دیامر بھاشاڈیم، بونجی ڈیم اور پاک چین اقتصادی راہداری کے منصوبے بہت اہم ہیں اور یہ سارے منصوبے گلگت بلتستان کی سرزمین پر تعمیر ہو رہے ہیں۔ ان منصوبوں کی کامیابی کے لیے لازم ہے کہ پاکستان کی ریاست اور حکومتیں اس آئینی طور پر محروم خطے کے غریب عوام کو تمام منصوبوں میں نہ صرف نمائندگی دیں بلکہ حقوق کے تحفظ کے لیے واضح، منصفانہ اور شفاف طریقہ کار اور حکمت عملی وضع کرے۔ ترقیاتی منصوبوں کے ثمرات سے گلگت بلتستان کو فائدہ پہنچانے کے لیے لازمی ہے کہ علاقے کونیشنل فائنانس کمیشن، مشترکہ مفادات کونسل اور وسائل کی تقسیم کے دیگر مرکزی آئینی اداروں میں نمائندگی دی جائے ۔ میرے خیال میں وہ وقت آن پہنچا ہے کہ پاکستان کی ریاست گلگت بلتستان کے لوگوں کے ساتھ ایک نیا اورمضبوط عمرانی معائدہ کرے تاکہ آئینی مسائل حل کرنے کے ساتھ ساتھ، قدرتی وسائل پر مقامی لوگوں کی حقِ ملکیت تسلیم کرنے اور صاف اور شفاف طریقے سے وسائل اور آمدنی کے منصفانہ استعمال کی سبیل ہو سکے۔ اگر ایسا نہ کیا گیا تو خطے کے باشعور اور تعلیم یافتہ نوجوانوں میں تیزی سے پھیلتے احساسِ محرومی کے اثرات خطرناک ہو سکتے ہیں۔

بزریعہ لالٹین

Comments

Popular posts from this blog

Gilgit-Baltistan – A Historical Narrative

BySyed Shamsuddin

Perceptibly, there abound divergent narratives and counter narratives wittingly or unwittingly churned out as to status of Gilgit-Baltistan which more often than not, have no bearing on and are sadly devoid of any substance when put in the correct historical perspective. In order to get the best and clearest possible picture, it becomes imperative to have a full view of and delve deeper into its background with a view to irrefutably place facts connected with the matter in the correct historical order by separating what is called the wheat from the chaff for the information of the readers as follows:
Strictly speaking, the region fell on turbulent times and troublous waters during the second half of the nineteenth century which may, with profit, be called the period of uncertainty and the gloomiest transitional phase in Gilgit-Baltistan’s context. Synoptically, region consisted of and apportioned into a dozen tiny kingdoms each ruled by despotic, independent rulers f…

Foiling India’s Inimical Designs

BySyed Shamsuddin A very interesting summation, aptly encompassing has been going on in Gilgit-Baltistan (GB) overtime in socio-political context, was published in a regional Urdu daily the other day. The learned writer offered a peep into the brief historical background of the region dating to the post-independence period, and referred precisely to what happened preceding the liberation of Gilgit-Baltistan. Beginning with briefly recording of the facts about how the British colonizers packed off by giving back the territory of Gilgit, in August 1947, to the Dogra occupiers, quite intriguingly with the condition that the latter would retain Major William Brown – a British military officer – to assign him the command of Gilgit Scouts. The move was ostensibly aimed at checking effectively and blocking Russo-China contacts, as well as to preclude Gilgit region from the impact of communists inroads into this land.
After the successful revolution of 1st November 1947, Gilgit emerged as a…

Eulogizing The Protectors of Culture and Tradition

BySyed Shamsuddin QUITE PROPITIOUSLY, a flurry of activities is getting underway in the context of revival of Shina language in its original form and diction. This is in addition to the marked efforts afoot to build a consensus among the literary circles formed by Shina speaking communities all across the Shina speaking areas – mostly inhabiting northern Pakistan and part of the Indian held Kashmir- to popularize and universalize a homogenized approach to a unified code aimed at sustaining and preserving this language which is sadly on the wane.
To give a recent example, Shakil Ahmad Shakil carried out a research work culminating in his products like ‘dade shilokeh’ (grandmas’s tales) and Shina Grammar, Aziz-ur-Rehman Malangi’s Shina Diwan and to top them all is Haji Shah Mirza’s translation of the Holy Qura’an into Shina which is greatly contributive to the existing literature in Shina. There is no gainsaying that viewed in terms of it originality of form, diction and etymology, Shin…